Allama Iqbal poem in urdu and english | قید خانہ میں معتّمر کی فریاد

Allama Iqbal poem in Urdu and English

The cry of the trustee in prison Allama Iqbal poem in English and Urdu with detailed translation from his book Baal e jibraeil

 

قید خانہ میں معتّمر کی فریاد

اک فُغَانِ بے شرر سینے میں باقی رہ گئ

سوز بھی رُخصت ہُوا جاتی رہی تاثیر بھی

مردِ حُر زنداں میں ہے بے نیزہ و شمشیر آج

میں پشیماں ہوں ، پشیماں ہے مری تدبیر بھی

خود بخود زنجیر کی جانب کھنچا جاتا ہے دل

تھی اسی فولاد سے شاید مری شمشیر بھی

جو مری تیغِ دودم تھی ، اب مری زنجیر ہے

شوخ و بے پروا ہے کتنا خالقِ تقدیر بھی !

Allama iqbal poem Translation in urdu

معتّمر اشبیلیہ کا بادشاہ اور ادبی شاعر تھا ۔ ہسپانیہ کے ایک حکمران نے اس کو شکست دے کر قید میں ڈال دیا تھا۔ معتّمر کی نظمیں انگریزی میں ترجمہ ہو کر ” وزڈم آف دی ایسٹ سیریز ” میں شائع ہو چکی ہیں ۔

Read Allama iqbal poem on Himalaya

1 ۔ قید میں رہتے ہوئے میرے سینے میں ایک ایسی فریاد باقی رہ گئی ہے جس میں کوئ چنگاری نظر نہیں آتی نہ اس میں سوزباقی رہا نہ اثر ۔

2 ۔ مجھ ایساآزاد مرد قید میں پڑا ہوا ہے ۔ نہ نیزہ اس کے پاس ہے نہ تلوار ۔ میں بھی اپنی اس حالت پر پشیمان ہوں اور میری تدبیر بھی پشیمان ہے ( میں بھی پچھتا رہا ہوں اور میری تدبیر بھی پچھتا رہی ہے ) ۔

تدبیر کی پشیمانی سے غالباً اس طرف اشارہ ہے کہ میں نے عیسائیوں کے مقابلے میں اسلامی حکومتوں کو محفوظ رکھنے کےلیے یوسف بن تاشفین کو بلایا تھا لیکن وہ خودان سلطنوںکا مالک بن بیٹھا اور مجھے قید کر لیا۔

3۔ میرا دل آپ ہی آپ کی طرف کھچا جا رہا ہے ۔ معلوم ہوتا ہے کہ اس زنجیر میں وہ بھی وہی فولاد استعمال ہوا ہے جس سے میری تلوار بنی تھی ( تلوار سے وابستگی کے حوالے سے کہا ہے ) ۔

4 ۔میری دودھاری تلوار جوکبھی میرے ہاتھ میں ہوتی تھی ۔ اب میری زنجیر ہے ۔ یعنی ایک زمانے میں میں صاحب شمشیر تھا اور اس وجہ سے تخت حکومت میرے قبضہ میں تھا ۔ واہ سبحان اللّہ ! انسان کی تقدیر کا خالق کس قدر شاخ اور بے پرواہ ہے ۔ اسی حکمرانی کے نتیجے میں آج میں زنجیر میں جکڑا ہوا ہوں

Read Allama iqbal poetry on Masjid tu bna di shab bhar main

Allama iqbal Poem in English

The cry of the trustee in prison

A sigh of relief remained in his chest

The pain was gone, and so was the effect

The freeman is in prison today without a spear or a sword

I am sorry, I am also sorry

The heart is automatically drawing to the chain

This sword is probably made of the same steel

What used to be a deadly knife is now a dead chain

Blessed is the Creator of Destiny

Read Allama Iqbal ghazal poch us sy

Writer Background History

Mutammar was the king of Seville and a literary poet. Spanish Ruler  won the war and he imperison the king .

Translation :

1. However, there is no spark, remnant, or effect remain in the chest due to prison.

Read complete Baal e jibraeil 

2. I have such a free man in prison. He has a spear nor a sword nevertheless indeed. I also regret my condition, and I regret my plan (I have been mourning, and my goal has also been regretting).

The plot’s remorse probably indicates that I called Yusuf ibn Tashfeen to protect Islamic governments from the Christians.

More importantly, he became the owner of the empires and imprisoned me.

3. My heart is drawn to you. It turns out that this chain used the same steel from which my sword was made (referring to the attachment to the blade).

4. My double-edged sword that was in my hand. Now I have a chain.

Previously, I was the sword owner, and therefore, the throne was in my possession.

Wow, Subhan Allah, the Creator of human destiny, is so branched and carefree. As a result of this rule, I am chained now.

 

allamaiqbal

I am Sabraiz, WordPress and SEO Expert. I love Allama Iqbal's poems, ghazals, and Poetry. You can message me through the contact us page for any query. I would love to answer it!

You may also like...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *