Poem by Allama Iqbal Spain

 

poem  by Allama Iqbal spain

علامہ اقبال کی لکھی ہوئ نظم

ہسپانیہ

 

( واپس آتے ہوۓ)
ہسپانیہ تُو خونِ مسلماں کا امیں ہے
مانندِ حرم پاک ہے تُو میری نظر میں
پوشیدہ تری خاک میں سجدوں کے نشاں ہیں
خاموش اذانیں ہیں تری بادِ سَحر میں
روشن تھیں ستاروں کی طرح ان کی سنانیں
خیمے تھے کبھی جن کے ترے کوہ و کمر میں

پھر ےتیرے حسینوں کو ضرورت ہے حِنا کی ؟
باقی ہے ابھی رنگ مرے خونِ جگر میں !
کیونکر خَس و خَاشَاک سے دب جاۓ مسلماں
مانا ، وہ تَب و تَاب نہیں اس کے شرر میں
غرناطہ بھی دیکھا مری آنکھوں نے ، و لیکن
تسکینِ مسافر نہ سفر میں نہ ، حضر میں
دیکھا بھی دکھایا بھی ، سنایا بھی سُنا بھی
ہے دل کی تسلی نہ نظر میں ، نہ خبر میں !

Read Allama Iqbal poem cinema

تشریح

 

۔ اے ہسپانیہ ! تُو مسلمانوں کے خون کا امانت دار ہے تیری سر زمین پر مجاہدین اسلام خاک و خون میں تڑپ کر شہید ہوۓ ۔ اس بنا پر تیری زمین میری نگاہوں میں کعبے کی طرح پاک ہے ۔ اس کے چپے چپے میں اسلام کے جلیل القدرمجاہد ، سالار ، تاجدار ، مدبر ، ادیب ، محدث ، قاضی ، فلسفی اور مورخ محو خواب ہیں ۔

۔  ! تیری خاک کے چپے چپے پر مسلمانوں کے سجدوں کے نشان چھپے ہوۓ ہیں ، اس لیے کہ وہ ساڑھے سات سو سال (۷۵۰) تک اسی سر زمین پر نمازیں ادا کرتے رہے ۔ صبح کے وقت تیرے طول و عرض میں، جو ہوا میں خاموش اذانیں گونجتی ہیں جو میں دل کے کانوں سے سن رہا ہوں ۔

۔ جن عرب بہادروں کے خیمے کبھی تیرے پہاڑوں اور ان کے دامنوں میں نصب تھے ۔ ان کے نیزے ستاروں کی طرح چمکتے تھے ۔

Read Allama Iqbal poem the first palm tree planted by abdur rehman

Complete Translation

۔ ! کیا تیرے حسینوں کو پھر مہندی کی ضرورت ہے ؟ اگر ہے تو میرے جگر کا خون یہ ضرورت پوری کر سکتا ہے ۔ اس میں ابھی تک سُرخی باقی ہے ۔

۔ میں یہ بات مانتا ہوں کہ مسلمان کی چنگاری میں پہلے کی سی تپش اور حرارت باقی نہیں ، لیکن وہ چنگاری گھاس پھوس سے کس طرح دب سکتی ہے ؟ ( مسلمانوں کو چنگاری سے اور باطل قوتوں کو خس و خاشاک سے تشبیہ دی ہے ) ۔

۔ میری آنکھوں نے غرناطہ بھی دیکھ لیا ، لیکن مسافر کے لیے سفر یا اقامت میں کہیں آرام اور سکون نہیں ۔

مراد یہ ہے کہ ہسپانیہ کے بہترین مناظر دیکھ کر بھی دل کو تسکین نہ ہوئ ۔ بلکہ دل کو سخت صدمہ پہنچا۔

۔ میں نے ہسپانیہ میں اسلامی آثار خود بھی دیکھے ۔ ان کے نقشے دوسروں کے سامنے بھی پیش کیے ۔ مسلمانوں کی داستانیں سُنیں بھی اور سنائ بھی لیکن نہ

دیکھنے سے دل نے چین پایا ، نہ سننے سے کسی طرح بھی میرے دل کو تسلی اور سکون نصیب نہ ہوا کہاں عظیم ماضی اور کہاں موجودہ خستہ حالی ۔ پھر دل کو قرار کیونکر نصیب ہو۔

Read Allama Iqbal poem “prayer of a prisoner

Allama Iqbal poem in spain

 

Spain

 

(Written in Spanish territory)
(Returning)
Spain, you are the mother of Muslim blood
As holy as the sanctuary, you are in my sight
There are signs of prostration in the hidden wet dust
There are silent azans in the morning wind
Their ears were as bright as the stars
There were tents once in the mountains and the backs

Then your beauties need henna?
There is still color in the dead blood of the liver.
Why should Muslims be suppressed?
Granted, that is not the case in its evil.
Granada also saw dead eyes, but
The satisfaction of the traveler neither in the journey nor in the presence
Seen and shown, heard, and heard.
The consolation of the heart is neither in sight nor in the news.

Poem Spain Translation

 

۔ O Spain, you are the trustee of the blood of the Muslims. The Mujahideen of Islam on your land were martyred in the dust and blood. That is why your land is as pure as the Ka’bah in my eyes. In its slippery slope are the glorious Mujahids of Islam, Salar, Tajdar, Mudabir, Adib, Muhaddith, Qazi, Philosopher, and Historian.

۔ O Spain, the marks of the Muslims’ prostrations are hidden on the dust of your earth, for they have been praying on this land for seven hundred and fifty years. In your dimension in the morning, the silent azans resound in the air that I hear with the ears of the heart.

۔ The tents of the Arab heroes who were once pitched in your mountains and at their foothills. Their spears shone like stars.

Complete Translation In English

 

O Spain, do your beauties need henna again? If so, my liver blood can meet this need. It still has headlines.

۔ I agree that the spark of a Muslim does not have the same warmth and warmth as before, but how can that spark be suppressed by weeds? (He likened the Muslims to a spark and the false forces to a scum).

۔ My eyes also saw Granada, but there is no comfort for travel or accommodation.

This means that even seeing the best views of Spain did not satisfy the heart. Rather, the heart was severely traumatized.

 

I also saw Islamic monuments in Spain. He also presented his maps to others. Listen and listen to Muslims’ stories, but not My heart was relieved to see it, and my heart was not relieved by hearing it. Where is the great past, and where is the present dilapidated condition? Then how can the heart be destined?
Read more about Allama Iqbal book Baal e Jibraeil

Published by allamaiqbal

I am Sabraiz, WordPress and SEO Expert. I love Allama Iqbal's poems, ghazals, and Poetry. You can message me through the contact us page for any query. I would love to answer it!

Leave a comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *