pooch us sy ghazal by Allama iqbal

 

غزل

پُوچھ اس سے کہ مقبول ہے فطرت کی گواہی
تو صاحبِ منزل ہے کہ بھٹکا ہوا راہی !
کافر ہے مسلماں، تو نہ شاہی ، نہ فقیری
مومن ہے تو کرتا ہے فقیری میں بھی شاہی !
کافر ہے تو شمشیر پہ کرتا ہے بھروسا
مومن ہے تو بے تیغ بھی لڑتا ہے سپاہی!
کافر ہے تو ہے تابعِ تقدیر مسلماں
مومن ہے ، تو وہ آپ ہے تقدیرِ الٰہی !
میں نے تو کِیا پردہٓ اسرار کو بھی چاک
دَیرِینَہ ہے تیرا مرضِ کَوُر نِگاہی !

 

Read Poem by Allama Iqbal cinema

first phrase

Pooch us sy ghazal by Allama Iqbal

poch us sy ghazal part 1

Ask him out well if he is no longer absorbed in the connection
So the owner of the destination is the lost path!

Translation of the first phrase

 

تو اپنے متعلق فطرت یعنی دل سے گواہی لے لے۔

اس کی گواہی سچ ہوتی ہے وہی تجھے بتا دے گا کے تو سیدھے راستے پر جا رہا ہے یا اس سے بھٹک گیا ہے۔
انسان خلوص سے دل میں سوچے تو خود معلوم ہو جائے گا کہ اس کا عمل دینی مقاصد کے مطابق ہے یا نہیں

۔دل کا فیصلہ اٹل اور ہمیشہ صحیح ہوتا ہے ۔

Translation in English

So take testimony about yourself from nature, that is, from the heart.

His testimony is true. He will tell you whether you are on the right path or deviate from it.

If a person thinks sincerely in his heart, he will know for himself whether his action is in accordance with religious purposes or not

The decision of the heart is unalterable and always right.

Second phrase:

kaafir hai musalman tu na shahi na faqeeri ghazal part 2

Muslims are infidels, neither royal nor poor
If he is a believer, he does so even in the poor!

 

Translation of the Second Phrase

مسلمان اگر نام کا مسلمان ہے اور اس نے کافروں کے طور طریقے اختیار کر رکھے ہیں تو اس میں اور کافر میں کوئی فرق نہیں

۔ تو اسے سلطنت اور فقر دونوں میں سے کوئی بھی نعمت نصیب نہیں ہو سکتی۔ نہ وہ دنیا میں عزت حاصل کر سکتا ہے نہ دین کی۔
اگر وہ صاحبِ ایمان ہو تو درویشی کی حالت میں بھی بادشاہی کرتا ہے بادشاہ اس کے قدم چومتے ہیں ۔

Translation in English

If a Muslim is a nominal Muslim and he has adopted the methods of disbelievers, then there is no difference between him and a disbeliever.

۔ So he cannot be blessed with either kingdom or poverty. He cannot gain respect in the world or in religion.

If he is a believer, he reigns even in the state of dervishes. The king kisses his feet.

Third Phrase :

kaafir tu shamsheer py karta hai bharoosa ghazal part 3

If he is a disbeliever, he trusts in the sword
If he is a believer, he also fights without a sword!

Translation of the third phrase:

مسلمان اگر صرف نام کا مسلمان ہے اور عملاً کافر تلوار پر اس کا بھروسا ہوتا ہے ۔

اگر وہ صحیح معنوں میں صاحبِ ایمان (مومن) ہے تو تاوار کے بغیر بھی جنگ کرتا ہے

۔ تو اللّٰہ کا وہ سپاہی تلوار یا کسی اور جنگی ہتھیار کے بغیر تن تنہا میدان جنگ میں سردھڑ کی بازی لگا دیتا ہے ۔

Translation in English

If a Muslim is only a nominal Muslim and in practice, he relies on the Kafir sword.

If he is a true believer, he fights without a sword

۔ So that soldier of Allah, without a sword or any other weapon of war, spreads his head on the battlefield alone.

4th phrase:

kaafir hai tu hai tabe taqdeer e musalman ghazal part 4

If he is a disbeliever, then Muslims are subject to destiny
He is a believer, so he is the destiny of God!

Translation of 4th phrase:

مومن کی شان یہی ہے کہ وہ اپنی جدوجہد میں ایسا کمال پیدا کر لے کہ خود اللّٰہ کی تقدیر بن جائے

۔ اس لیے کہ تقدیر جوشِ عمل کے نتائج کا نام ہے اس لیے کہ مومن کا ہر کام رضائے باری تعالیٰ کے مطابق ہوتا ہے ۔

اس لیے اسے اللّٰہ کی تقدیر قرار دینا بلکل درست ہے

The glory of a believer is that he creates such perfection in his struggle that it becomes the destiny of Allah Himself.

۔ Because destiny is the name of the result of zeal because every action of a believer is in accordance with the pleasure of the Almighty.

Therefore, it is quite correct to call it the destiny of Allah

5th phrase:

main ny tu kya pardae asraa ko bhe chaak ghazal part 5

I have torn the veil of mystery
It is too late for your eyes to see!

Translation of 5th phrase:

میں نے تو بھیدوں ( رازوں ) کا پردہ چاک کر کے ہر حقیقت کھول کر بیان کر دی لیکن اے مخاطب! میں کیا کروں ،

تیرے اندھے پن کی بیماری بہت ہی پرانی ہو چکی ہے ۔ یہ دور نہیں ہوتی اور تو کچھ کر نہیں سکتا ۔ ( تیرے آئینہ دل کو زنگ لگ چکا ہے ) ۔

یہاں اندھے پن ( کورنگاہی ) سے مراد آنکھوں کا نہیں دل کا اندھا پن ہے ۔ دل کی عشق حقیقی کے جزبوں سے محرومی ہے ۔

I have opened the veil of secrets and revealed every truth, but O addressee! what shall I do,

Your blindness is very old. It doesn’t go away and you can’t do anything. (Your mirror heart is rusty).

Blindness here refers to the blindness of the heart, not the eyes. The love of the heart is the deprivation of true emotions.

read Baal e jibraeil book

Published by allamaiqbal

I am Sabraiz, WordPress and SEO Expert. I love Allama Iqbal's poems, ghazals, and Poetry. You can message me through the contact us page for any query. I would love to answer it!

Leave a comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *