The first palm tree planted by Abdul Rahman I | Allama Iqbal poem

Abdul Rahman planted the first palm tree I.

Abdul Rahman planted the first palm tree I.
In mainland Andalusia

عبدالرحمٰن اوّل کا بویا ہوا کھجور کا پہلا درخت
سر زمین اندلس میں

میری آنکھوں کا نور ہے تو
میرے دل کا سُرور ہے تُو
اپنی وادی سے دور ہوں میں
میرے لۓ نخلِ طُور ہے تو
مغرب کی ہوا نے تجھ کو پالا
صحراۓ عرب کے حُور ہے تُو
پردیس میں ناصبور ہوں مَیں
پردیس میں ناصبور ہے تو
غُربت کی ہوا میں باروَر ہو
ساقی تیرا نمِ سَحر ہو

عَالم کا عجیب ہے نظارہ
دامانِ نگہ ہے پارہ پارہ
ہِمّت کو شناوری مبارک !
پیدا نہیں بحر کا کنارہ
ہے سوزِ درُوں سے زندگانی
اُٹھتا نہیں خاک سے شرارہ
صبحِ غُربت میں اور چمکا
ٹوٹا ہُوا شام کا ستارہ
مومن کے جہاں کی حد نہیں ہے
مومن کا مقام ہر کہیں ہے

Read Allama iqbal poem cinema

The first palm tree planted by Abdul Rahman I Poem in english

The first palm tree planted by Abdul Rahman I

In mainland Andalusia

I have light in my eyes
You are the joy of my heart
I am far from my valley
I have a palm tree
The west wind has nourished you
You are the maiden of the Arabian desert
I am impatient in a foreign land
If you are in a foreign land
Be fruitful in the wind of poverty
May the butler be your moisture

The view of the world is strange
Daman-e-Niga is torn to pieces
Congratulations on your courage
Not created by the sea
There is life through burning doors
It does not rise from the dust
The morning shone brightly in poverty
The broken evening star
There is no limit to the world of the believer
The position of the believer is everywhere

 

یہ اشعار جو عبدالرحمٰن اوّل کی تصنیف سے ہیں ، تاریخ المقری میں درج ہیں ۔ مندرجہ زیل اُردو نظم ان کا آزاد ترجمہ ہے ۔ ( درخت مزکور مدینتہ الزہرا میں بویا گیا تھا ) ۔
علامہ محمد اقبال رحمۃ اللّہ علیہ نے پہلے بند میں اس کے شعروں کا آزاد ترجمہ کیا ہے ۔ دوسرا بند اقبال کے اپنے تاثرات کا مرقع ہے ۔

Read More about palm trees 

These poems, written by Abdul Rahman I, are listed in Tarikh al-Muqari. The following Urdu poem is his free translation. (The tree was planted in Madinah Al-Zahra).
Allama Muhammad Iqbal (may Allah have mercy on him) has freely translated his poems in the first stanza. The second stanza is a reflection of Iqbal’s own impressions.

تشریح
بند نمبر 1 ۔

اے کھجور کے درخت !تُو میری آنکھوں کا نور ( روشنی ) ہے تُو میرے دل کی خوشی ہے ۔
میں اپنے وطن سے دُور یہاں پردیس میں بیٹھا ہوں تُو میرے وطن کا خاص درخت ہے اور میرے لیے تو نخلِ طور کی سی حیثیت رکھتا ہے ( جو تجلئ حق کی وجہ سے نخلِ طور کو حاصل ہوئ تھی ) ۔

تجھے یورپ کی آب و ہوا نے پالا پال پوس کر جوان کیا حالانکہ تُو عرب کے جنگل کی حُور ہے یعنی میری طرح تو بھی پردیس میں پلا اور سرسبز و شاداب ہوا ۔ جس طرح میں نے پردیس میں آکر سلطنت قائم کی۔

میں بھی پردیس میں بے صبر اور بے قرار ہوں اور تو بھی ۔ ( وطن سے محبت کے حوالے سے کہا ہے ) ۔

میری دعا ہے کہ اس اجنبی سرزمین کی آب و ہوا میں تُو پھولے پھلے اور صبح کی شبنم تیرے لیے ساقی بنے اور تیری پیاس بجھاۓ اور تجھے تازہ اور ہرابھرا کرے ۔

Translation of the first paragraph in English

O palm tree, you are the light of my eyes; you are the joy of my heart.
I am sitting here in a foreign land far from my homeland.

You are the special tree of my homeland, and for me, it is like a palm tree (which was acquired by the palm tree due to the manifestation of truth).

 

The climate of Europe has rejuvenated you, even though you are the maiden of the Arabian jungle. That is, like me, you grew up in a foreign land and flourished. The way I came to a foreign country and established an empire.

I am also impatient and restless in a foreign country, and so are you. (Referring to the love of homeland).

 

I pray that you may flourish in the climate of this foreign land and that the morning dew may become a cup for you and quench your thirst and make you fresh and green.

 

بند نمبر 2 ۔

دنیا کا سماں نہایت انوکھا اور نرالہ ہے اسے دیکھ کر نگاہ کا دامن ٹکڑے ٹکڑے ہوا جاتا ہے یہاں کسی کو کسی کی حالت میں قرار نہیں ۔

آج ایک انسان عروج کی بلندیوں پر پہنچا ہوا ہے کل اس طرح گر جاتا ہے کہ کہیں ٹھکانا نہیں ملتا یہ عروج و زوال کے یہ نظارے دیکھے نہیں جا سکتے ۔

اس کائنات کی مثال ایک سمندر کی ہے ، جس کا کوئ کنارہ نظر نہیں آتا ہو یہاں عزم و ہمت کے بغیر گزارہ نہیں ہو سکتا ۔

مبارک ہیں وہ لوگ جو عزم و ہمت سے کام لے کر اس سمندر میں تیرے رہتے ہیں ( یا تیراکی کرتے ہیں ) ہمت کو تیرنا مبارک ۔
انسان مٹی کا پتلا ہے مٹی سے کبھی چنگاریاں نہیں اٹھتیں ۔

یہاں وہی انسان حقیقی معنی میں زندہ رہ سکتا ہے ، جو باطن کے سوزوگراز یا تپش یعنی دل کی جلن سے شرف پا چکا ہو ، مسلسل جدوجہد سے کام لینا ہی حقیقی زندگی ہے ۔

ملک شام کے آسمان کا یہ ٹوٹا ہوا تارا پردیس کی صبح میں اور زیادہ روشن ہوگیا۔ یعنی عبدالرحمٰن شام میں تھا تو اموی خاندان کا ایک شہزادہ تھا ۔

 

وہاں سے نکل کر اندلس پہنچا تو ایک بہت بڑی سلطنت کا مالک اور بانی بن گیا اس کا نام ہمیشہ کے لیے سنہری حروفوں میں ثبت ہو گیا ۔

اس شعر میں صبح اور شام کا تقابل قابل غور ہے ۔

مومن کے جہان کی حد کوئ نہیں ۔ اس کا مقام ہر جگہ ہے وہ جہاں جاتا ہے اپنے لیے مقام اور وطن پیدا کر لیتا ہے ۔

مومن کے رہنے کی جگہ زمین کا کوئ خاص حصہ ، ملک یا براعظم نہیں ہے بلکہ سارا جہاں اس کا وطن ہے ۔

Translation of the second paragraph in English

The time of the world is unique and unique. Seeing it, the footsteps of the eye are torn to pieces. No one is in a state of being here. Today a person has reached the heights of heights.

Tomorrow he falls in such a way that there is no place to go. These scenes of rising and fall cannot be seen.

 

An example of this universe is an ocean, the shore of which cannot be seen. One cannot live here without determination.

Blessed are those who work hard and live (or swim) in this sea.
Man is thin of clay. Sparks never rise from clay.

 

The only person who can live here in the true sense is the one who has been honored by the burning of the heart. Real-life is to work with constant struggle.

This broken star of the Syrian sky became even brighter in the morning. In other words, Abdul Rahman was in Syria when he was a prince of the Umayyad dynasty.

The comparison of morning and evening in this poem is noteworthy.

There is no limit to the world of the believer. His place is everywhere. Wherever he goes, he creates a place and a homeland for himself.

The believer’s abode is not a specific part of the earth, country, or continent, but the whole world where he lives.

allamaiqbal

I am Sabraiz, WordPress and SEO Expert. I love Allama Iqbal's poems, ghazals, and Poetry. You can message me through the contact us page for any query. I would love to answer it!

You may also like...

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *